مہاجرین کا عالمی دن، جو ہر سال دسمبر میں منایا جاتا ہے،

 



مہاجرین کا عالمی دن، جو ہر سال دسمبر میں منایا جاتا ہے،

جی آئی۔زی کے تعاون سےزیر اہتمام "عالمی مستقبل کی تعمیرسیمینار  تارکین وطن کی قابلیت اور مہارتوں کی پہچان بین الاقوامی تارکین وطن کے دن پر قومی کانفرنس کا انعقاد کیا گیا،،

مہاجرین کا عالمی دن دنیا بھر کے معاشروں میں تارکین وطن کے تعاون کو تسلیم کرنے اور منانے کے لیے ایک عالمی پلیٹ فارم مہیا کرتا ہے مہاجرین کے عالمی دن پر ہجرت کے مثبت اثرات پر غور کرنے، انہیں درپیش چیلنجوں کے بارے میں بیداری پیدا کرنے  کی حوصلہ افزائی کرتا ہے

تقریب نے 60 سے زیادہ اسٹیک ہولڈرز کی ایک متنوع رینج کو اکٹھا کیا، جن میں سرکاری حکام، پالیسی ساز، ماہرین تعلیم، سفارت کار، بین الاقوامی تنظیمیں، اور سول  سوسائٹی کے نمائندے شامل ہیں  

اوورسیز ایمپلائمنٹ کارپوریش کے مینجر ڈائریکٹر نصیر خان کاشانی کا کہنا تھا کہ اس وقت پوری دنیا میں  تارکین وطن کی تعداد 272ملین ہے ۔ دنیا بھر میں ہمارے لوگ جاتے ہیں ، آج کا دن انکو پیش آنے والی مشکلات  کو حل کرنے کے لیے ہے۔ 

انٹرنیشنل سنٹر فار مائگریشن پالیسی ڈیولپمنٹ کی مینجر ڈائریکٹر مس حنا مقصود کا کہن تھا کہ آج کے دن جو مائیگرینٹس ہیں انکو اکنالج کیا جائے اور ان کی جو سکلز ہیں ان کو سراہا جائے ۔ان کو ایسے پلیٹ فارم مہیا کرنے کی ضرورت ہے جہاں پر ان کی سکلز زیادہ سے زیادہ پالش ہو سکے ۔

مائگرینٹ ایسوسیٹ سینٹر اسلام اباد کہ کارڈینیٹر عمر وزیر نے اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ہمیں یہ دیکھنا ہے جو لوگ پوری دنیا میں جاتے ہیں انکو کونسی سکلز کی ضرورت ہوگی آنے والے دنوں میں جو یہاں سے سکلز سیکھ کر جائیں گے انکو اتنا فائدہ ہوگا۔ 

تقریب کے آخر میں سوال و جواب کے سیشن کا انعقاد کیا گیا اور مہمان پینل کو شیلڈز بھی پیش کی گئی۔

0/Post a Comment/Comments