جمہوریت کے نام پر تماشا ہورہا ہے ، ملک میں آئین اور جمہوریت نہیں : شعیب شاہین

(اسلام آباد)

تحریک انصاف کی لیگل ٹیم کے رکن شعیب شاہین نےالیکشن کی تاریخ کے اعلان کو خوش آئند قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ سپریم کو کریڈٹ دیتے ہیں کہ ان کی مداخلت سے الیکشن کی تاریخ کا اعلان ہوا تاہم تاریخ پر لگے اس دھبے کو دھونا ضروری ہے،صاف شفاف انتخابات کا انعقاد الیکشن کمیشن کی ذمہ داری ہے، پاکستان کی تمام سیٹوِں سے الیکشن لڑیں گے،ملک میں آئین اور جمہوریت کہیں نظر نہیں آتی جمہوریت کے نام پر تماشا ہو رہا ہے، ادارے جمہوریت کو چلنے نہیں دے رہے،پی ٹی آئی کے لوگوں پر پریشر ڈالا جا رہا کہ پارٹی چھوڑ دیں، ن لیگ کو سپورٹ کیا جا رہا ہے ،اب الیکشن کمیشن اپنی آئینی ذمہ داریاں پوری کرے، تاخیر اور آئین کی معطلی کا کسی کو ذمہ دار نہ ٹھہرایا تو غلط ہو گا،اس بار 6 ماہ کی تاخیر کے بعد الیکشن ہو گا، سزا نہ دی تو اگلی بار مزید تاخیر ہو سکتی ہے،الیکشن کمیشن کے خط کے تحت فواد حسن فواد سمیت پی ایم ایل این کے نگران وزیروں کو ہٹایا جائے،سپریم کورٹ کو اس معاملے کا نوٹس لینا چاہیئے،بیرسٹر گوہرکے ہمراہ نیشنل پریس کلب اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے شعیب شاہین کا مزید کہنا تھا کہ الیکشن کی تاریخ کے اعلان کو خوش آئند قرار دیتے ہوئے کہا کہ  صدر پاکستان، الیکشن کمیشن ،صوبائی حکومتوں سمیت تمام اسٹیک ہولڈرز کی رائے سے الیکشن کی تاریخ کا تعین ہوگیاہے،آج کے فیصلے سے متعلق سپریم کورٹ کو کریڈٹ دیتے ہیں، پنجاب اور دیگر صوبوں میں آئین پر فیصلہ نہیں کیا گیا، 13 ماہ بعد پنجاب میں الیکشن ہو گا، الیکشن کمیشن کو غیر جانبدار ہو کر تمام فیصلے کرنے چاہئیے ، بہت سے ایسے فیصلے ہیں جن کے آڈرز ہمارے پاس نہیں ہیں،الیکشن کمیشن کو اس پر نظر ثانی کرنی چاہیے ،پی ٹی آئی کے لئے شک رکھا گیا  کہ بلا اور پی ٹی آئی اس الیکشن میں ہو گا کہ نہیں؟اگر کوئی آئین کے مطابق فیصلہ نہیں کر سکتا تو اپنی کرسی چھوڑ دے، آئین صرف کتابوں میں ہے  ملک میں آئین اور جمہوریت کہیں نظر نہیں آتی ،جمہوریت کے نام پر تماشا ہو رہا ہے، ادارے جمہوریت کو چلنے نہیں دے رہے،پی ٹی آئی کے لوگوں پر پریشر ڈالا جا رہا کہ پارٹی چھوڑ دیں ،ن لیگ کو سپورٹ کیا جا رہاہے، اداروں کو چاہئےکہ اپنے فیصلوں پر نظر ثانی کریںملک کے عوام کے ساتھ کھلواڑ نہ کیا جائے، ایسی صورتحال میں ملکی معاشی معاملات کیسے چلیں گے،وقت سے پہلے الیکشن کو متنازعہ نہ بنایا جائے ، خدشہ ہے کہ ہمارے لوگوں کو الیکشن سے پہلے اٹھایا جائے گا الیکشن کمیشن کو اس وقت اپنا رول ادا کرنا چاہئے، پنجاب حکومت اور ن لیگ کے لوگوں کو نگران حکومت سے بے دخل کرنا چاہئے،اس موقع پر بیرسٹر گوہر کا کہنا تھا کہ آج سے انتخابی مہم شروع ہو گئی ہے، ہمیں انٹرا پارٹی الیکشن نہ ہونے کے باعث نشان الاٹ نہیں کیا گیا بعد میں کہا گیا الیکشن کمیشن کی جانب سے الیکشن کے لئے نشان الاٹ کر دیا جائے گا ہمیں امید ہے الیکشن کمیشن ہمیںپیریا منگل تک تحریری فیصلہ دے دیگا،اگرسپریم کورٹ الیکشن کی تاریخ نہ دیتی تو شائد آج بھی الیکشن کی تاریخ کا حتمی اعلان نہ ہوتا، آج سے ہماری انتخابی مہم شروع ہوچکی ہے تحریک انصاف کوخیبر پختونخوا میں جلسے کی اجازت تو ہے پورے ملک میں جلسوں کے لئےہم نے الیکشن کمیشن اور عدالت میں رجوع کررکھا ہے امید ہے پیریامنگل تک پی ٹی آئی کو انتخابی نشان بلے کا تحریری فیصلہ مل جائے گااگر گرفتاریاں نہ روکی گئیں الیکشن کے نتائج پر حرف آئے گا۔
 

0/Post a Comment/Comments